You are here

اِسلام میں بندے اور رب کے درمیان کوئی واسطہ نہیں

بہت سے مذاہب نے بعض افراد کو دوسروں پرمذہبی امتیاز عطا کیا اورلوگوں کی عبادتوں کو اوران کے ایمان کو ان اشخاص کی رضا مندی کے ساتھ جوڑدیا۔

ان مذاہب کے مطابق وہ اشخاص انسانوں اور معبود کے درمیان واسطہ ہیں، وہی بخشش دیتے ہیں اور غیب کا علم رکھتے ہیں جیسا کہ وہ اس قسم کا باطل دعوی کرتے ہیں اور اس کی مخالفت کو کھلے گھاٹے کا سبب بتاتے ہیں۔
اسلام آکر انسان کو مکرم بنایا اور اس کی قدر کو بلند کیا اورانسانی سعادت یااس کی توبہ یا عبادت کو بعض مخصوص اشخاص کے ساتھ مربوط ہونے کو باطل قرار دیا اگرچہ وہ صلا ح وتقویٰ میں اونچا مقام رکھتے ہوں ۔
 تو مسلمان کی عبادت اللہ اوراس کے رسول کے درمیان ہے، انسانوں میں سے کسی کو اس میں کسی قسم کا دخل نہیں ہے، اللہ سبحانہ اپنے بندوں سے قریب ہے وہ بندے کی دعائیں سنتا ہے ان کو قبول بھی کرتا ہے، اس کی عبادت اور نماز بھی دیکھتا ہے، اور اسے اس پر ثواب سے نوازتا ہے، انسانوں میں سے کسی کو مغفرت اور توبہ کا اختیار نہیں ہے، جب بھی بندہ خلوص کے سا تھ توبہ کرتا ہے تو اللہ تعالیٰ اس کی توبہ قبول فرما تے ہیں، اسے مغفرت دیتے ہیں، اس کائنات میں کسی کے پاس نہ کوئی تاثیر ہےاورنہ خرق عادت کی طاقت ہے بلکہ سارا معا ملہ اللہ کے پا س ہے۔ 
اسی طرح اسلام نے مسلمان کی عقل کو نہ صرف آزادی دی بلکہ اسے سوچنے اور سمجھنے کی بھی دعوت دی اور اختلاف کے وقت قرآن اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے اقوال وافعال کی طرف رجوع کرکے فیصلہ کرنے کی بھی دعوت دی۔ انسانوں میں سے کوئی بھی حق مطلق کا مالک نہیں جس کی ہر بات ماننا ضروری ہو سوائے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے، کیونکہ وہ اپنی خواہش سے نہیں بولتے، بلکہ اللہ تعالیٰ کی وحی اور رہنمائی سے بولتے ہیں جیسا کہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: ((اور نہ وہ اپنی خواہش سے کوئی بات کہتے ہیں ۔وہ تو صرف وحی ہے جو بھیجی جاتی ہے)) ۔ (النجم :4-3) 
اللہ نے ہم پر اس دین کے ذریعہ بڑا انعام فرمایا جو کہ فطرت سے مطابقت رکھتا ہے اور انسان کو مکرم نیز اس کواپنے نفس کا مالک و مختار بناتا ہے اور اسے غیر اللہ کی عبودیت اور خضوع سے آزاد کرتا ہے۔
 

آسان رہنمائے مسلم

آسان رہنمائے مسلم کی ویب سائٹ کتاب "آسان رہنمائے مسلم" کا الکٹرانک نسخہ ہے۔ یہ شرکۃ الدلیل المعاصر کا ایک پروجیکٹ ہے، جسے زائد از پندرہ زبانوں میں تیار کیا گیا ہے، اور اس کے مشمولات متعدد معیاری الکٹرانک شکلوں میں موجود ہیں۔